آئین کی بالادستی یا منظم انتشار

سیاسی قضیے: 17 مئی، 2018

آئین کی اہمیت کو سمجھنا ہو تو ایک ایسے معاشرے کو تصور میں لانا چاہیے، جہاں آئین سرے سے موجود ہی نہ ہو۔ یا ایک ایسے معاشرے کو متصور کرنا چاہیے، جہاں آئین موجود تو ہو، مگر اس پر عمل درآمد صرف نام کے لیے ہو۔ یعنی اس پر عمل درآمد نہ ہوتا ہو۔

بالخصوص جب اورنگ زیب کی حکومت ختم ہوئی، اس وقت کا برصغیر، ایک ایسا ہی ایسا معاشرہ تھا، جہاں آئین سرے سے موجود ہی نہیں تھا۔ آئین تو اس سے قبل بھی موجود نہیں تھا، مگر ایک مضبوط اور ’’دانا‘‘ حاکم …

Continue Reading →

دا سنگہ آزادی دہ ـ آزادی یہ کیسی ہے

’’پشتون تحفظ موومینٹ‘‘ کے نام
[لاہور میں جلسے کے موقعے پر]

دا سنگہ آزادی دہ
آزادی یہ کیسی ہے، محفوظ  نہیں کوئی
آزادی یہ کیسی ہے، آزاد نہیں کوئی

دا سنگہ آزادی دہ
آزادی یہ کیسی ہے، اپنے ہی بنے آقا
آئین نہیں کوئی، سرکار نہیں کوئی

دا سنگہ آزادی دہ
آزادی یہ کیسی ہے، قانون نہیں کوئی
آزادی یہ کیسی ہے، انصاف نہیں کوئی

دا سنگہ آزادی دہ
آزادی یہ کیسی ہے، شنوائی نہیں کوئی
سننے کو گلہ ہرگز، تیار نہیں کوئی

دا سنگہ آزادی دہ
آزادی یہ کیسی ہے، تذلیل مقدر ہے
ہم بھی ہیں وطن دوست، غدار …

Continue Reading →

اشرافیہ کی سیاست اور ’’پشتون تحفظ موومینٹ‘‘ کی سیاست

سیاسی قضیے: 15اپریل، 2018

اشرافیہ کی سیاست، بخشنے، عطا کرنے،  دینے اور دان کرنے سے عبارت ہے۔

جیسے روٹی، کپڑا اور مکان دینے کا نعرہ۔

یا پھر بلا تعطل بجلی کی فراہمی۔ یا جیسے کہ سڑکیں، پبلک ٹرانسپورٹ، وغیرہ۔

اور ایسی ہی دوسری چیزیں، جو وقت اور موقعے کی مناسبت سے اشرافی سیاسی جماعتوں کے انتخابی منشور کا حصہ بنتی ہیں۔

سوال یہ ہے کہ کیا سیاسی جماعتیں اور ان کے سربراہ یہ چیزیں لوگوں کو اپنے پیسے سے مہیا کرتے ہیں۔

اس کا صاف جواب ہے: قطعاً نہیں۔

خواہ یہ روٹی، کپڑا اور مکان ہو، یا بجلی، یا کوئی …

Continue Reading →

اگر ملک کے معاملات آئین کے مطابق نہیں چلا سکتے، تو آئین کو تحلیل کر دیں

سیاسی قضیے: اتوار 11 مارچ، 2018

ایک جانور بھی کسی جگہ رہتا ہے تو اسے اس جگہ سے کچھ نہ کچھ لگاؤ ہو جاتا ہے۔ مگر یہ پاکستان کیسا ملک ہے، اس کے اشرافی طبقات کو ستر برس بعد بھی اس ملک، اس کی زمین، اس کے لوگوں سے ذرا بھی تعلق نہیں۔ ملک کی سیاست اور معیشت پر نظر ڈالیں تو یوں محسوس ہوتا ہے کہ جیسے مالِ غنیمت کو لوٹنے کی دوڑ لگی ہوئی ہے، اور یہی وہ سبب ہے کہ ہر ادارہ سیاسی ریشہ دوانیوں سے گہنایا ہوا ہے۔

زیادہ دور نہیں جاتے۔ صرف گذشتہ دو حکومتوں …

Continue Reading →

The 21st point: Overhaul the state

Note: This article was completed on December 31st, 2014, and was originally posted on this Blog in January 2015.

Presently there is happening quite a serious debate on the 20 points envisaged in the National Action Plan. Its thrust is on two points:

i) All these measures should have been in their place since long as a matter of routine, probably from the day first when Pakistan came to exist; and,

ii) Due to the past negligence of the governments, doubts and questions are being raised about the efficacy of these measures.

Continue Reading →

Military courts: a moral perspective

A person who is murdered, has he any rights? That question may seem strange. Let me add another dimension to it: What’s the spirit of law? Does it exist for the rights of the murderers to be protected? Or, it exists for the alive so that they enjoy their life safe and sound? Last year, in a seminar on the citizens’ fundamental rights when I made a comment that most of the NGOs are always ahead in safeguarding the rights of those who are accused of capital crimes but why they never …

Continue Reading →

Charter of Democracy’s half truth

As the Pakistan Tehreek-e-Insaf and Pakistan Awami Tehreek launched this August 14 their “Azadi March” and “Inqilab March” respectively, and then undertook the Sit-Ins (Dharnas) in Islamabad; day by day it was increasingly perceived as a deadly threat to political constitutional set-up prevailing in the country. With worsening law and order situation in the capital including the fears of occupation of state buildings by the marchers, the fear of military intervention loomed large on the political horizon. However, in the face of it something very surprising took place: All the political parties …

Continue Reading →

Media wars

It is essential to seek out enemy agents who have come to conduct espionage against you and to bribe them to serve you. Give them instructions and care for them. Thus doubled agents are recruited and used. [Sun Tzu]
Before March 9, 2007, it was all dark on the horizon of Pakistan. A military dictator was ruling while dressed in khaki uniform; he was intent upon continuing his rule for the next 5 years; and the criminal politicians were all ready to help him rule for more than a hundred years. Such was the hopelessness that no rational being could

Continue Reading →